Pakistan Zindabad

آج یوم پاکستان کی پریڈ ہے، اس پریڈ سے بچپن کی کئی یادیں وابستہ ہیں، زیادہ پرانی بات نہیں جب یہ پریڈ ہمارے لیے بالکل معمول کی چیز تھی، یعنی تئیس مارچ آنا ہے اور پریڈ ہونی ہے اور اس بارے میں کوئی دوسری بات سوچی بھی نہیں جا سکتی تھی
مگر پھر وہ وقت بھی آیا جب دہشتگردی کے آگے جھکتے ہوئے ہم اپنے معمولات سے دستبردار ہوتے گئے، پریڈ، میلے ٹھیلے، تہوار سبھی یہ کچھ بدل گیا، آہستہ آہستہ ہم ان سب کو ختم کربیٹھے، ہم نے ایک آدھ بار کے بعد شاید اس بات کو محسوس بھی نہیں کیا کہ ایسی کوئی تقریبات ہوتی تھیں اور ان کی ایک قومی اہمیت بھی ہے
غیر محسوس طریقے سے ہم اپنی قومی خوشیوں سے دستبردار ہوتے چلے گئے خواہ وہ پریڈ ہو یا کرکٹ یا کوئی اور تہوار

سیاسی اور فوجی قیادت کی تبدیلی کے بعد چیزیں تبدیل ہونا شروع ہوئیں، دہشت گردی کی کارروائیوں میں نمایاں کمی آئی، گو کہ دہشت گردی کے محرکات و اسباب اور وجود آج بھی موجود ہے اور آج بھی وہ ہماری خوشیوں کے دشمن ہیں، آج بھی وہ ہمارے شہروں میں کاروائیاں کرنے کی کوشش کرتے ہیں مگر اب ہماری سیاسی و عسکری قیادت اس نقطے پر متفق ہو چکی ہے کہ ہم نے ان چیزوں کی وجہ سے اپنے معمولات زندگی سے دستبردار نہیں ہونا بلکہ مناسب حفاظتی اقدامات کے ساتھ اپنی رونقیں اور خوشیاں واپس لانی ہیں، اس تمام کوشش کو ہمارے دوست ممالک کی حمایت بھی حاصل ہے
آج پاکستان تمام تر دہشتگردی اور دیگر منفی عوامل کے باوجود اپنی سمت کے بارے میں ایک واضح نظریہ اور حکمت عملی رکھتا ہے، آج ہم چھوٹی چھوٹی خوشیوں سے دوبارہ روشناس ہورہے ہیں، آج ہمارے کوچہ و بازار کی رونقیں پھر سے بحال ہوچکی ہیں
خواہ وہ چھوٹے بڑے تہوار ہوں یا کھیلوں کے مقابلے، آج ہم دوبارہ دشمن کے سامنے سینہ تان کر کھڑے ہیں اور اس کا سہرا عوام، سیاسی و عسکری قیادت کے سر ہے
آج کی رنگا رنگ تقریب دیکھ کر دل خوشی اور طمانیت سے بھر گیا ہے، معمول کی چھوٹی چھوٹی خوشیاں بھی جب چھن جانے کے بعد دوبارہ ملیں تو انکی علامتی اہمیت بہت بڑھ جاتی ہے
آج کی اس تقریب کو چین، ترکی اور سعودی عرب کے دستوں کی شرکت نے چار چاند لگا دیئے ہیں
چھوٹے چھوٹے قدم بھی جب نئے سرے سے لینے پڑیں تو وہ بڑے ہوجاتے ہیں
خدائے ذوالجلال سے دعا ہے کہ ہمیں اپنی چھوٹی بڑی خوشیوں کی حفاظت کرنے کی توفیق عطا فرمائے آمین
پاکستان زندہ باد

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *