Anokha Laadla Aur Uski Siyasat

اَنوکھا لاڈلا اور اُسکی سیاست
السلام علیکم دوستو
کافی دن ہو گئے تھےکچھ لکھا نہیں پاکستان کی سیاست پتا نہیں کس طرف جا رہی ہے ایک سیاسی جماعت نےپوری سیاست کا ستیاناس کر دیا ہے ستیاناس کےالفاظ سے آپ کو وہ پارٹی کی سمجھ لگ ہو گئی اِس پارٹی کا لیڈر پاکستان کا اَنوکھا لاڈلا بننے کی کوشش میں رہتا ہے کبھی وہ لاشوں کا سہارہ لیتا ہے اور کبھی وہ سانحہ کے انتظار میں رہتا ہے حالانکہ جناب لاڈلے بچے کو پاکستان کی سب سے بڑی سپورٹ حاصل ہے میڈیا کی اور بوٹوں کی مگر افسوس یہ سب طاقتیں مل کر بھی لاڈلے کی عزت نہیں رکھ پاتیں
لاڈلے کہ پاس ایک صوبائی حکومت بھی ہے لیکن اس صوبے کا حال آپ سب کے سامنے ہے خیر اُسکی ٹینشن نہیں کیونکہ وہاں کے لیڈر ہی اُنکی ٹینشن نہیں لیتے لیکن لیکن پنجاب میں سانحہ اور لاشیں ڈھونڈنے کے لئے باقاعدہ ٹیم تشکیل دی گئی ہے جس کی سربراہی جناب فرنگی لوٹا چوہدری سرور کر رہا ہے موصوف کی اگر تعریف لکھنا شروع کروں تو پورا دن لگ جائےگا. خیر یہ سب باتیں جو میں نے لکھی وہ کسی سے ڈھکی چھپی نہیں بات کرنے کا مقصد یہ تھا کیا تبدیلی لاشوں اور خدائی آفتوں کے زریعے لانی ہے
کیا تبدیلی ماوں بہنوں کی عزتوں کے لٹنے کے بعد سیاست کر کے لانی ہے
کیا تبدیلی ماوں کے شہید بیٹوں کی لاشوں کےساتھ سیلفیاں اور فوٹوشاپ کرکے لانی ہے
کیا تبدیلی شادیاں کرکے اور طلاقیں دےکرلانی ہے
کیا تبدیلی لوگوں کے کالے پیسے سے لانی ہے
کیا تبدیلی اپنی پارٹی میں شامل لینڈ مافیا شوگر مافیا اور تماشبیینوں کو شامل کر کے لانی ہے
کیا تبدیلی نشے میں دھت تجزیہ نگاروں کے تجزیوں سے آنی ہے
اگر ایسے تبدیلی لانی ہے تو مجھے بھوکا رہنا ہے
مجھے اپنی ماں بہن کو چار دیواری میں رکھنا ہے
مجھے ایسا پاکستان نہیں لینا جس میں یہودیوں کی فنڈنگ شامل ہو
مجھے ایسا پاکستان نہیں لینا جہاں پر میری ماں بہن کو بازاروں اور چوکوں میں نچایا جائے اور فحاشی پھلائی جائے
مجھے ایسا پاکستان نہیں لینا جس میں ایک طرف ماوں کی کوک اجھڑ رہی ہو اور دوسری طرف شادی رچائی جارہی ہو
مجھے ایسا پاکستان نہیں لینا جب ہماری فوج دنیا کے سب سے خطرناک دہشت گردوں سے لڑ رہی ہو اور آپ کنٹینر پر کھڑے ہو کر اُن کہہ رہے ہوں کے اُنکو ٹیبل ٹاک پر لایا جائے
کیا ہم اپنے بچوں کے قاتلوں کو کرسی میز پر بٹھا دیں اور انکی ناجائز خواہشات کے اگے سر جھکا دیں
مجھے ایسا پاکستان نہیں چاہیئے
مجھے ایسا پاکستان نہیں چاہیئے
مجھے ایسے ہی جینے دو
مجھے پرانے پاکستان میں مرنے دو

2 thoughts on “Anokha Laadla Aur Uski Siyasat

  • August 16, 2016 at 7:30 pm
    Permalink

    کامی ویرے ???. اچھی اور عمدہ کوشش کی ھے. ناجانے ہم میں سے کتنے ایسے ھونگے جو الفاظ کے چناو، املا اور جملوں کی ترتیب کے ڈر خوف سے کچھ لکھنے سے گھبراتے ہیں. جب لکھیں گے ہی نہیں تو غلطیوں کی نشاندہی کیسے ھو گی. آپ نے اچھی کوشش کی ھے. امید ھے بعد کی تحریروں میں مزید بہتری اور نکھار آئے گا.

    Reply
  • September 16, 2016 at 5:55 pm
    Permalink
    Brother Kami,U have Written very good column,please carry on writing,It will be good day by day, Thanks, Mian NAVEED Akhtar.
    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.