Kabhi To Milke Batao

کبهی تو مل کے بتاو

کبهی تو مل کے بتاو کہ ایسے ملتے ہیں
مجهے پتا ہے تمہیں چهوڑ جانا آتا ہے

مرے عجیب سوالوں کا فائدہ تو ہوا
پتا چلا کہ اسے مسکرانا آتا ہے

یہاں چراغ سے آگے چراغ جلتا نہیں
فقط گهرانے کے پیچهے گهرانہ آتا ہے

ابھی جزیرے پہ ہم تم نئے نئے تو ہیں دوست
ڈرو نہیں ۔۔ مجھے سب کچھ بنانا آتا ہے

وہ بولی اور سمسٹر بریک کر ڈالا
سنا تھا آپ کو لکھنا لکھانا آتا ہے

یہ بات چلتی ہے سینہ بہ سینہ چلتی ہے
وہ ساتھ آتا ہے ۔۔ شانہ بہ شانہ آتا ہے

ستارے دیکھ کے جلتے ہیں آنکھیں ملتے ہیں
لکّی کے ہاتھ یہ دن کا خزانہ آتا ہے

ادریس بابر

3 thoughts on “Kabhi To Milke Batao

  • February 28, 2016 at 2:17 am
    Permalink
    واہ واہ زبردست ????
    Reply
  • February 28, 2016 at 2:33 am
    Permalink
    واہ ادریس بابر صاحب بہت خوب
    Reply
  • February 28, 2016 at 6:43 am
    Permalink
    بہت زبردست
    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *