Koi To Lafz Ho Aisa

کوئی تو لفظ ہو ایسا

کوئی تو لفظ ہو ایسا
کوئی تو شَبد ہو ایسا
ہماری داستاں کہہ دے
ہر اک لمحہ بیاں کہہ دے
صدائے خامشی تیری
ثنا ئے محرماں ٹھہرے
اَنا کی دُھند میں لِپٹا
یہ رازِ مہرِ ما کہہ دے
ترے پُر ناز اشاروں کو
اَدائے دِلبری کہہ دے
تری اُلفت کے مارے کو
وہ شرحِ بے بسی کہہ دے
وہ تیرے اَشک میں ڈوبا
وہ میرے بخت سے اُلجھا
کوئی تارہ تو اب چمکے
سیاہی حال کی بدلے
گلِ حرف اس طرح نکھرے
کہ دشتِ وقت ہی مہکے
جو اس الجھی کہانی کو
فلک سی لامکانی کو
کرے یوں مختصر کہ پھر
اَدا تیری کوئی، ساقی!
رہے نہ اَن کہی باقی
سزا میر ی کوئی، ساتھی!
ادھوری نہ رہے باقی
مگر میری سزا‍ؤں میں
کمی ہو کِس طرح ممکن؟
خموشی کی چِتاؤں میں
نَمی ہو کس طرح ممکن؟

کوئی تو لفظ ہو ایسا
کوئی تو شَبد ہو ایسا
ہماری داستاں کہہ دے
ہر اک لمحہ بیاں کہہ دے

اِمتنان قاضی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.