Qaumi Saneha

قومی سانحہ
باچا خان یونیورسٹی چارسدہ پر دھشتگردوں کا حملہ کیا ہوا اپنی زندگیوں میں مصروف لوگوں کی توجہ وقتی طور پر ایک بار پھر بہتے ناسور کی جانب مبذول ہوگئی
واجبی تعلیم اور محدود معلومات رکھنے والے پاکستانیوں نے اِدھر اُدھر نگاہ دوڑائی تو ہر پلیٹ فارم پر ایسی قیامتِ صغریٰ دیکھنے کو ملی جس میں سب ہی “توجہ” کا صور پھونکنے میں مصروف تھے ۔ ہمارا الیکٹرانک میڈیا جس طرح اس کا محلِ وقوع بیان کررہا تھا اب کبھی جانا ہو تو نقشہ سارا ذہن میں محفوظ ہے ۔ لاشوں اور زخمیوں کی براہِ راست فوٹیج دکھانے والےیقیناً اپنے گھر کی میتیں یوں دکھانے کا حوصلہ رکھتے ہی ہوں گے
اپنے اپنے جھنڈوں کو اونچا رکھنے کیلیے ملبہ دوسرے مسالک پر ڈال دینا یا یہود و ہنود کی سازش قرار دے دینا کوئی نئی بات نہیں مگر اس کا کیا کیجے کہ “اللہ اکبر”  کا اعلان کرتے رب العالمین کی مخلوق سے زندگی کا حق چھیننے والوں کی عمریں ہمیشہ چودہ سے اکیس کے درمیان ہی ہوتی ہیں ۔ کچے اذہان کو تشریحاتی جنت اور حور کے لتھڑے تصور سے روشناس کروانے والوں کا تعلق انہی آماجگاہوں سے ہے جو ہمارے ایک جنرل صاحب کے مطابق ریاست کا پانچواں ستون ہیں اور بھارت سے جنگ ہو تو یہی بچے دشمنوں پر پھٹ کر دانت کھٹے کریں گے۔اب اُدھر جنگ ہوتی نہیں تو کہیں نا کہیں پھٹ کر تربیت کا اظہار کرنا بھی تو لازم ٹہرا تناور پیڑ کو دیکھتے ہم اس کی پنیری لگانے والوں،گوڈی اور آبیاری کرنے والوں کو یکسر فراموش کردیا کرتے ہیں
بے حسی کی اس سے بڑی کیا مثال ہوگی کہ کسی ماں کا جگر گوشہ چند چیتھڑوں کی صورت تابوت میں بند گھر آئے اور ریاست ماں کا بیانیہ ہو کہ  “نقصان کی شدت اور نوعیت کم ہے” اپوزیشن کرسیوں پر براجمان دانشور فرماتے ہیں کہ ریاست دفاع پر اسی طرح پیسہ لگائے جیسا پلوں اور بسوں پر لگا رہی ہے ۔ یہ تو معیار ہے آپ کی دانشوری اور مسائل کے حل کا ۔ جب آپ لوگ بھول ہی جائیں کہ ضربِ عضب نامی سفید ہاتھی کتنے بلین پر پالا گیا ہے، سالانہ دفاعی بجٹ کتنا ہے اور تعلیم و صحت پر کیا لگایا جارہا ہے۔کبھی کسی نے پلٹ کر سوال نہیں کیا کہ کتنے ویر جوان شہید ہوچکے ، ان کی تفصیلات کیا ہیں یا کہاں دفن کیے جارہے ہیں
اس سے بڑا المیہ کیا ہوگا کہ ہمارا محافظ گالیاں دیتا کبھی کہے کہ چار دھشتگرد ہم نے جہنم واصل کیے اور اگلے ہی سانس میں انکشاف کرے کہ دو خود کش جیکٹیں پھٹ گئیں اور دو کی جیکٹس سلامت رہیں ۔ جبکہ ابتدائی اطلاعات میں تین دھشتگردوں کے فرار کی خبر بھی گرم رکھی گئی ۔ کسی نے اُن سے سوال کیا کہ “ضربِ عضب میں آپ خود کو کتنا کامیاب تصور کرتےہیں ؟ ” صاحب کا جواب تھا کہ یہ سوال آپ کو اپنے آپ سے کرنا چاہیے،یہ پلیٹ فارم ایسے سوالات کا متحمل نہیں ۔ وما علینا الا البلاغ المبین
مسئلہ اس سے بھی کہیں زیادہ اذیت ناک تب ہوجاتا ہے کہ جب سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر آپ کو قوم کے نام پر ہیجان زدہ ہجوم دیکھنے کو ملے۔چند فالؤرز، کچھ لائکس اور بیشتر ری۔ٹویٹس کی بھوک میں لوگ ہر قسم کا چورن، سستے معجون اور گھٹیا منجن  کی  کم نرخوں پر خریدو فروخت جاری رکھتےہیں ۔ کوئی سِول اداروں کو رگیدے گا تو کوئی عسکری موضوع پر دانشور بنا ابکائیاں کرتا دکھائی دےگا۔یہاں آپ کو بوٹ پالش کرتے ضمیر فروش دکھائی دیں گے تو اپنے سیاسی و مذہبی اکابرین کی خاطر ایمان بیچتے ذہنی مریضوں کی بھی کچھ قلت نہیں
تاریخ ، جغرافیہ ، عالمی و مقامی سیاسی پس منظر کے علاوہ مذہبی و مسلکی معاملات میں مطالعہ و تحقیق کے نام پر چند اخباری تراشے اور کچھ پلانٹڈ خبروں پر تکیہ کیے سوشل میڈیائی بقراط کفر و غداری کے فتوے چند گھنٹے تقسیم کریں گے اور شام میں جب دیکھیں تو ہنسی ٹھٹھے کا سامان، جُگتوں بھرا اجتماع اور وہی گھسے پٹے سیاسی ٹاک شوز کے ٹوٹے چلائے جائیں گے ۔ دو چار ٹرینڈز بنالیے اور زندگی واپس اپنی ڈگر پر ۔ زخم صرف اُن والدین کا ہرا رہے گا جنہوں نے اولاد سے وابستہ روشن امیدوں کو خون کا غسل کیے منوں مٹی تلے  مدفون ہوتے دیکھا ۔ سکون و خوشی ہمارے ہاں دو سانحات کا درمیانی وقفہ بن کر رہ گئے ہیں
ہمارے ہاں اگر ظالمان کے دفاتر کھلوانے والے عوامی نمائندے موجود ہیں تو لال مسجد میں بٹھائے ٹائم بم کا دفاع کرنے والے اعلیٰ اذہان بھی پائے جاتےہیں ۔ اختلافِ رائے جمہوریت کا حسن ہوگا مگر قاتل اور دھشتگرد کی تعریف کیلیے اختلافات صرف یہ بتاتے ہیں کہ آپ ان کے آگے  پنجابی والے “کانے” ہیں
ایک مائکرو بائیولوجسٹ ، پروفیسرز یا علم حاصل کرتے بچے درسگاہوں میں ملک و قوم اور گھرانوں کے روشن مستقل کیلیے جاتے ہیں۔ان کے ذمہ وہی کام ہے مگر عوامی ٹیکسوں سے تنخواہیں وصولتے محافظ  اور ریاست چلاتے نمائندگان کا فرض ان بچوں کے کھاتے کیوں ڈالا جارہا ہے ۔ سخت اور کڑے فیصلے کرنا اور دھشتگردوں کو کیفرِ کردار تک پہنچانا ان درسگاہوں سے وابستہ لوگوں کا کام نہیں اور نہ ہی اپنی جانیں گنوا کر شہداء کا رتبہ پانا ۔ ماں اپنے بچے کو وطن پر قربان ہونے کیلیے سرحد پر بھیجتی ہے تعلیمی اداروں میں نہیں ۔ کبھی سوچیے گا کہ ہمارے بچوں کو سکول کی وردیاں پہنا کر دشمن کوسُر سنگیت میں للکارتے، پکارتے اُن کی ڈھال بننے کی بجائے اگلی صفوں میں تو نہیں لے آئے ۔ تصور کیجیے بطن میں پلتے ننھے وجود کا جسے ماں چھو نہیں سکتی مگر ہر لمحہ اس کی حرکت سے باخبر رہتی ہے
ہر سانحے پر فرداً فرداً شدید مذمتی بیانات ، قومی پرچم سرنگوں ، دس روزہ سوگ کا اعلان ، ایک عدد آل پارٹیز کانفرنس ، بیس نکاتی ایکشن پلان کی منظوری ، فوجی عدالتیں ، کمیٹیاں ، تحقیقاتی ٹیمیں ، جذباتی گانا اوربرسی پر مزید سنگیت کے ساتھ ایک عدد لہو رنگ سرورق والی کتاب کے علاوہ بہادر قوم کی عظیم قربانی کا پہاڑا پڑھنے والوں کے دامن پر اپنے ہی طلباء اور اساتذہ کے خون کے چھینٹے نظر انداز کیےجاؤ کہ حُب الوطن ہونے کیلیے آج کل اہم شرط یہی ہے ۔ مائیں ان کے گریبان پکڑیں تو پاگل،باپ بولیں تو غدار۔ کہانی ختم اور قومی سانحے کی اگلی قسط کےمنتظر ہم عوام

جاتے جاتے ایک آخری گزارش کہ ریاست کو ماں جیسا کہنا بند کیجے کیونکہ ہمارے معاشرے میں “ماں کی ۔۔۔” سن کر خالی جگہ کے لئے جو پہلا لفظ خیال میں آتا ہے وہ خدمت نہیں ہے

11 thoughts on “Qaumi Saneha

  • January 23, 2016 at 12:23 am
    Permalink

    ماشالله بہت اچھا لکھا آپکے بلاگ ہماری معلومات میں اضافے کا بڑا ذریعہ ہیں

    Reply
  • January 23, 2016 at 3:43 am
    Permalink

    بہت دلگداز تحریر ہے اس سے زیادہ کیا کہوں 😰😢

    Reply
  • January 23, 2016 at 6:40 am
    Permalink

    سچ آکھاں بھانبڑ بلدا اے، بہت اچھا لکھا۔

    Reply
  • January 23, 2016 at 10:54 am
    Permalink

    افسوس کا مقام یہ ھے کہ دھشتگردی کی حالیہ لہر کو ایک دھائی سے زائد عرصہ بیت چُکا مگر ابھی تک ھم اس کو “ناسور” ماننے پر بھی متفق نہیں.

    Reply
  • January 23, 2016 at 11:13 am
    Permalink

    واو بہت عمدہ اور ہر پہلو کا خوبصرتی کے ساتھ احاطہ کیا اور جو کچھ ہو رہا ہے اسے بہت خوبصورتی سے اجاگر کیا ہے سس 👍👍👍👍

    Reply
  • January 23, 2016 at 12:50 pm
    Permalink

    بہت عمدہ اور جھنجھوڑ دینے والی تحریر

    Reply
  • January 23, 2016 at 1:02 pm
    Permalink

    بہت اچھا لکھا ہے. اپنے جذبات و خیالات کی کافی حد تک ترجمانی نظر آئی

    Reply
  • January 24, 2016 at 7:27 pm
    Permalink

    بہت اعلٰی، ایک تڑپتی اور سسکتی ہوئی حقیقت بیان کر دی۔ اللہ کرے زورِ قلم اور زیادہ

    Reply
  • January 24, 2016 at 8:56 pm
    Permalink

    ماشاء اللّہ بہت اچھا لکھا ہے ایک ایسی تحریر جس نے غمزدہ کر دیا

    Reply
  • January 29, 2016 at 3:59 pm
    Permalink

    Speechlees i wish every Pakistani read this! great and bold piece excellent

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *